36

اسکولز بند کرنے کی وفاق کی تجویز مسترد کرتے ہیں، پاکستان پرائیویٹ اسکولز ایسوسی ایشن

(ٹیوٹرپاکستان) پاکستان پرائیویٹ اسکولز ایسوسی ایشن نے متفقہ طور پر وفاق کی 24 نومبر سے 31 جنوری تک بند کرنے کی تجویز کو مسترد کردیا ہے۔
ایسوسی ایشن کے ہنگامی اجلاس میں چئیرمین پرویز ہارون نے کہا کہ پاکستان پرائیویٹ اسکولز ایسوسی ایشن وزیر تعلیم سندھ کے اعلان کی بھرپور حمایت کرتی ہے کہ سردیوں کی چھٹیوں کی ضرورت نہیں۔ وفاق کی24 نومبر سے 31 جنوری تک بند کرنے کی تجویز کو مسترد کرتے ہیں۔کاشف مرزا صدرآل پاکستان پرائیویٹ سکولز فیڈریشن

سکولزدوبارہ بند نہیں ہوں گے۔کھلے رکھنےکاواضح اعلان ہو چکا ہے۔
انہوں نے کہا کہ بچوں کا پہلے ہی بہت زیادہ تعلیمی نقصان ہو چکا ہے، اس وقت تعلیمی اداروں میں بچوں کی تعداد ویسے بھی کم ہے اور اسکولز بچوں کو متبادل دنوں یا شفٹوں میں بلا رہے ہیں۔ دیگر شعبہ جات کے مقابلے میں تعلیمی ادارے سختی سے ایس او پیز پر عملدرآمد کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کی طرف سے سیاسی اجتماعات پر پابندی کا فیصلہ خوش آئند ہے۔ کورونا کے پھیلنے کی ذمہ داری بھی غیر ذمہ دارانہ سیاسی اجتماعات پر ہے۔

اقوامِ متحدہ، یونیسف، یونیسکو و عالمی بنک ایڈوایزری کےمطابق کورونا خدشات میں بھی سکولز کھلے رکھے جائیں، بند کرنے سے نقصانات زیادہ ہیں۔

چئیرمین پرویز ہارون نے کہا کہ اگر کسی اسکول سے کورونا کیسز پوزیٹو آتے ہیں تو انہیں 15 دن کے لئے بند کیا جا سکتا ہے اگر کسی علاقے میں کورونا کے زیادہ کیسز ہیں تو اس علاقے کو چند دنوں کے لئے بند کیا جا سکتا ہے۔ مگر ملک بھر کے اسکولز کو بند کرنے کا فیصلہ انتہائی غیر ذمہ دارانہ ہوگا۔ جو نجی تعلیمی اداروں کے لئے کسی صورت قابل قبول نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں