61

ریٹائرمنٹ کےعین قریب 17000 ملازمین کی جبری بر طرفی سمجھ سے بالا تر ہے- بزرگ صحافی اقبال قریشی

لاہور(ٹیوٹرپاکستان) لاہور پریس کلب میں جاری ملک بھر کے 17000 برطرف ملازمین کےاحتجاجی بھوک ہڑتالی کیمپ کے نویں روز مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے معروف بزرگ صحافیوں اور سیکڈ ایمپلائز ایسوسی ایشن کے مرکزی قائدین نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں ریٹائرمنٹ کے قریب 17000 ملازمین کی برطرفی سمجھ سے بالا تر ہے. انھوں نے کہا کہ بر طرف ہونے والے ملازمین کی بحالی زندگی اور موت کا مسئلہ ہے انھیں فوری طور پر نوکریوں پر بحال کر کے ملک میں جاری بحران حل جائے.
معروف بزرگ صحافی اقبال قریشی نے اپنے خطاب میں دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے سے ملازمین کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہو گئے ہیں اور صدمے سے ان کی اموات ک سلسلہ شروع ہو گیا ہے جو قابل مذمت ہے.
اانھوں نے چیف جسٹس سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ انسانی ہمدردی کی بنیاد پر نظر ثانی کی اپیل منظور کریں اور ملازمین کے دکھوں کا مداوا کرتے ہوئے انھیں فوری طور پر بحال کریں.
انھوں نے کہا کہ پوری قوم ان ملازمین سے اظہار یک جہتی کر رہی ہے-اور ان کی جدوجہد تیزی سے پھیل کر قومی تحریک میں تبدیل چکی ہے. انھوں نے کہا کہ اگر ایسے حالات میں اپوزیشن ان ملازمین کے ساتھ کھڑی ہو گئی تو حکومت کے لیے مشکلات کھڑی ہو سکتی ہیں.مرکزی جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے رہنماء سید جاوید شاہ نے حکومت سے فوری طور پر جوائنٹ سیشن کا اجلاس بلا کر برطرف ہونے والے ملازمین کی بحالی کا قانون پاس کرنے کا مطالبہ کیا…
اسلام آباد سے مرکزی جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے رہنماء سید جاوید شاہ نے کہا کہ وفاقی حکومت اگر برطرف ملازمین سے ہمدردی رکھتی ہے تو فوری طور پر ان کی داد رسی کرے. انھوں نے کہا کہ نظر ثانی اپیل میں ابھی تک کوئی پیش رفت نہ ہونا باعث تشویش ہے.
سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سابق سیکرٹری آفتاب باجوہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ دو دو بار برطرفی سے یہ تاثر دیا جا رہا ہے جیسے بر طرف ملازمین اس ملک کے دوسرے درجے کے شہری ہیں..انھوں نے کہا کہ دنیا کے کسی بھی قانون میں ایسا بھونڈا مذاق نہیں کیا گیا جہاں پارلیمنٹ کے بنائے قانون کو ردی کی ٹوکری میں پھینک دیا جائے اور مقننہ کی بالا دستی پر سوالات اٹھنے لگیں.
انھوں نے کہا کہ ملازمین کی ریٹائرمنٹ سے عین پہلے برطرف کر دیا جانا کہاں کی عقلمندی ہے یہ لوگ اب اپنے بچوں کے اخراجات اور دال روٹی کہاں سے پوری کریں گے.
احتجاج کے نویں روز کیمپ میں صحافیوں وکلاء برادری سماجی عہدیداروں ‘ سول سوسائٹی اورۃ برطرف ملازمین کی بڑی تعداد نے شرکت کی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں