34

سیاسی و سماجی شخصیت ڈاکٹر محمد یوسف مرحوم کے ایصال ثواب کی لیے محفل کا اہتمام

لاہور سیاسی و سماجی شخصیت ڈاکٹر محمد یوسف مرحوم کے ایصال ثواب کی لیے محفل کا اہتمام

سیاسی و سماجی شخصیت ڈاکٹر محمد یوسف مرحوم کے ایصال ثواب کی لیے محفل کا اہتمام کیا گیا جس میں علاقے بھر کی سیاسی سماجی اور مذہبی شخصیات نے شرکت کی جس میں مرحوم کے صاحبذادوں محمد عثمان یوسف ۔ محمد عبداللہ یوسف اور مفتی ابن مفتی صاحبزادہ حافظ امین نے تلاوت قرأن پاک کی تلاوت کی سعادت حاصل کی دور دراز سے أے ہوۓ سیاسی سماجی لیڈرز کے علاوہ علماء کرام نے مرحوم کی شخصیت اور فکر أخرت پر روشنی ڈالی مقامی علماء کرام میں پیر محمد علی برکاتی۔ مذہبی سکالر محمد أصف سیالوی۔ دعوت اسلامی کے ذمہ دار عبدالرزاق بھائ. .بلبل مدینہ حکیم ابوبکر عطاری محمد أصف نورانی ۔ قاذی معمد صفدر ۔ مدرسہ مدینہ کے اساتذہ مفتی طعیب علی عطاری۔ حافظ طاہر عطاری۔ مفتی ناظم علی عطاری نے خوبصورت بیانات کیے مولانا مفتی محمد امین نقشبندی کے خصوصی بیان میں مرحوم کی ذندگی کے بارے بتایا کی ڈاکٹر محمد یوسف انتہائ شفیق ہمدرد اور دکھیوں کے ہمیشہ کام أنے والے تھے مساجد اور مدارس سے تعاون کرتے نیکی کے کاموں میں بھر چڑھ کر حصہ لیتے اس موقع پر ہر أنکھ اشک بار تھی مرحوم کے چھوٹے بھای نے جب روتے ہوے اپنے خیالات کا اظہار جب اس شعر سے کیا کہ
بچھڑا کچھ اس ادا سے کہ رت ہی بدل گئ
اک شخص سارے شہر کو ویراں کر گیا
کون تولے گا اب ہیروں میں ہمارے أنسوں کو
وہ جو درد کا تاجر تھا وہ دنیا چھوڑ گیا
یہ سنتے ہی تمام أھوں سسکیوں سے گونج اٹھا ہر اپنا بےگانہ رو رہا تھا
ڈاکٹر محمد یوسف کی دین سے لگاو اور حسن اخلاق کا ہی نتیجہ ہے کہ ان کی موت پر بھی رشک أتا ہے سچ کہتے ہیں ایسے انسان صدیوں بعد پیدا ہوتے ہیں مرحوم کے والد مولانا حاجی محمد یعقوب مرحوم بھی نیک صفت انسان یہ سب انکی تربیت کا صلہ ہے کہ انکی اولاد ہر نیک کام میں بھر چڑھ کا حصہ لیتے ہیں۔ مرحوم کے چھوٹے بھائ ڈاکٹر محمد رمضان شاہد بھی اپنے والد اور بھای کے نیک کاموں میں اسی طرح جاری رکھے ہوۓ ہیں ۔ اس گۓ گزرے دور میں ڈاکٹر صاحب نے جس طرح اپنے ماں باپ اور بھائ کی خدمت کی أج کی نوجوان نسل کے لیے ایک خوبصورت مثال ہے اللہ تعالی مرحومیں کو جنت الفردوس میں اعلی مقام۔عطا فرماے اور ڈاکٹر رمضان کو صحت والی لمبی زندگی عطا فرماۓ أمین

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں