38

چیف ایگزیکٹیوآفیسر جاز(JAZZ)عامر ابراہیم کا بیرون ملک پاکستانیوں کو مقامی سٹارٹ اپ کی معاونت پر زور

اسلام آباد(ٹیوٹرپاکستان) سی ای او جاز عامر ابراہیم نے سمندر پار پاکستانیوں پر زور دیا ہے کہ وہ مقامی سٹارٹ اپ میں اپنا بھرپور کردار ادا کریں کیونکہ پاکستان میں سمندرپار پاکستانیوں کے لیے بے پناہ مواقع موجود ہیں۔آرگنائزیشن آف پاکستانی انٹرپینوور سلی کون ویلی کی جانب سے ”پاکستان میں سرمایہ کی حقیقت“کے عنوان پر ایک ویب نارکرایا گیا۔ آربیٹریم ٹیکنالوجی(Arbitrium Technology) کے مینیجنگ پارٹنر آصف عالم کی میزبانی میں منعقدہ اس ویب نار میں سلی کون ویلی کے نمائندوں اور دنیا بھرسے نوجوان انٹرپینورز نے شرکت کی۔ چیف ایگزیکٹیو جاز(JAZZ) عامر ابراہیم نے ڈیجیٹل ایکو سسٹم،سرمایہ کاری تک رسائی اور سرمایہ کاری کے طریقوں کو ٹیکنالوجی سے جوڑنے کی اہمیت پر زور دیااور بتایا کہ ہم نے براڈ بینڈ استعمال نہ کرنے والے 8کروڑ(80ملین)صارفین کو4G تک رسائی کا دائرہ بڑھا دیا ہے۔ڈیجیٹل اکانومی کے لیے حکومت کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں تاکہ کوئی بھی پاکستانی اس سہولت سے محروم نہ رہے۔جنوبی کوریا میں 80 فیصد تک رسائی ہونے کے بعد 5Gمتعارف کرایا گیا تاہم پاکستان میں ابھی تک 30فیصدصارفین کی4Gتک رسائی ہے۔

ڈیجیٹل فنانشل سروسز پر بات کرتے ہوئے عامر ابراہیم کا کہنا تھا کہ جاز کیش ماہانہ 90لاکھ(نو ملین) صارفین کو سہولت دیتاہے،بائیو میٹرک ویری فکیشن سے صارفین کا ڈیٹا پہلے ہی لیا جا چکا ہے جس سے صارفین کو اکاونٹ بنانے اور دیگر کاغذی کارروائی میں مدد مل رہی ہے، برانچ لیس بینکنگ کو تین سے چار گنا تک بڑھایا ہے، مزید اضافہ کی راہ میں بڑی رکاوٹ مہنگے ا سمارٹ فونز اور ڈیجیٹل فنانشل سروسز سے آگاہی کا نہ ہونا ہے۔

”کورونا کے باعث اگرچہ آن لائن لین دین میں اضافہ ہوا تاہم ای کامرس کو ڈیجیٹل فنانشل ایکو سسٹم کی ضرورت مزیدبڑھی ہے۔ ٹرانزیکشنزکی تکمیل اور مسائل کے حل میں ہم صرف ”پے پال“پر ہی انحصار نہیں کر سکتے۔“کورونا وبا میں ٹیلی کام سیکٹر میں پاکستان کی کارکردگی دیگر ممالک کی نسبت بہتر رہی ہے جس میں ہماری معاونت بھی شامل ہے۔کورونا کے دوران ہم نے ڈیجیٹل سروسز، موبائل انٹرنیٹ کی مسلسل فراہمی اور آن لائن ایجوکیشن پر کام کیااورایک ارب بیس کروڑ کے ریلیف پیکج دیا۔جاز نے اسمارٹ لاک ڈاؤن سسٹم کے دوران قرنطینہ، ایس ایم ایس سروس، زیرو ریٹ کال اور رقم کی ترسیل کے اخراجات میں کمی کی، سستے ڈیٹا بنڈلزدیے،سروسز کے معیار کو مزید بہتر کیا اور”پڑھو ایپ“ بھی متعارف کرائی۔

نیشنل انکیوبیٹرسنٹر(NIC) کے حوالے سے انہوں نے کے کہا کہ وفاقی دارالحکومت میں اس کی کارکردگی پہلے کی نسبت زیادہ بہتررہی ہے اس پر حکومت اور ماہرین کو مل کرکام کرنے کی ضرورت ہے۔جاز صارفین کی طلب کے مطابق یو آئی/ یو ایکس کی فراہمی پر توجہ دے رہا ہے، انٹرپینوور زکو چاہیے کہ وہ وقت ضائع کیے بغیر اپنی مصنوعات کو بہتر بنانے پر توجہ دیں۔ہمیں مثبت رویوں سے اعتماد کو بڑھانا ہے تاکہ نوجوانوں کوزیادہ مواقع میسر آئیں گے۔انہوں نے سٹارٹ اپس کو تجویز دی کہ وہ فنڈنگ کے علاوہ امریکہ میں موجود پاکستانیوں کے تجربات سے بھی فائدہ اٹھائیں۔

ویب نارکے اختتام پر سوال جواب کا سیشن ہوا، شرکا نے عامر ابراہیم سے اسٹارٹ اپس ریٹ میں ناکامی کی شرح، ای کامرس پلیٹ فارم کے بڑے پیمانے پر امکانات، پاکستان کومیسر منفرد مواقع، کم ٹیرف ریٹس، زیادہ ٹیکس والا ماحول اورسرمایہ کاری پر توانائی بحران کے اثرات پر سوالات کئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں